After three weeks of kidnapping, Naveed Butt is still not presented in court (Urdu)

By June 6, 2012 Campaign No Comments
vid-nb-royal

نوید بٹ کو اغوا کے تین ہفتوں بعد بھی عدالت میں پیش نہیں کیا گیا


پاکستان میں حزب التحریر کے ترجمان نوید بٹ کو اسلام آباد ہائی کورٹ کے حکم کے باوجود تین ہفتے گزر جانے کے بعد بھی عدالت میں پیش نہیں کیا گیا۔ حکومتی وکیل نے یہ عذر پیش کیا کہ متعلقہ ایجنسیوں کو ابھی تک نوٹس بھیجے نہیں جاسکے لہذا مزید وقت دیا جائے جس پر عدالت نے 11 جون کی نئی تاریخ دے دی جب تک نوید بٹ کو اغوا ہوئے ایک ماہ کا عرصہ گزر چکا ہوگا۔ مواصلاتی ترقی کے اس دور میں اسلام آباد ہائی کورٹ کے نوٹس تین ہفتے گزر جانے کے بعد بھی متعلقہ اداروں کو بھیجے نہیں جا سکے اور عدالت نے بھی کمال مہربانی کا مظاہرہ کرتے ہوئے مزید ایک ہفتے کا وقت دے دیا۔ کیا یہ بات حیر ت کا باعث نہیں کہ “آزاد عدلیہ” سیاسی حکمرانوں کے ساتھ ساتھ فوجی اداروں سے بھی اپنے احکامات کی تعمیل کرانے سے قاصر ہے یا عدالتیں بھی دراصل قانونی موشگافیوں کا سہارا لے کر ان حکومتی غنڈوں کو اپنی غیر قانونی سرگرمیوں کو مکمل کرنے میں معاونت فراہم کر رہی ہیں۔ کیا آزاد عدلیہ اس حقیقت سے واقف نہیں کہ امریکی جاسوس سفارتی حیثیت کی آڑ لے کر اسلحے سمیت پورے ملک میں دندناتے پھرتے ہیں اور پکڑے جانے کے باوجود ان کے خلاف کوئی مقدمہ نہیں بنتا بلکہ انھیں باعزت رہا کر دیا جاتا ہے جبکہ پاکستان سے امریکی راج اور سرمایہ دارانہ نظام کے خاتمے اور خلافت کے قیام کا مطالبہ کرنے والوں کو دن دھاڑے اور رات کے اندھیروں میں ان کے بیوی بچوں کے سامنے سے اغوا کر لیا جاتا ہے، انھیں تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور یہ دھمکیاں دیں جاتی ہیں کہ اگر خلافت کے قیام کی پرامن سیاسی جدوجہد سے باز نہ آئے تو قتل کر دیے جاوں گے۔ ایک طرف “آزاد عدلیہ” اپنے ایک حکم کی تعمیل نہ کرنے پر سیاسی حکومت کے سربراہ گیلانی کو تو عدالت میں طلب کرتی ہے لیکن سینکڑوں لاپتہ افراد کے اغوا میں کیانی کے غنڈوں کے ملوث ہونے کے واضع شواہد کے باوجود کیانی کو کیو ں عدالت میں طلب نہیں کیا جاتا؟ کیا عافیہ صدیقی، سانحہ لال مسجد، اڈیالا جیل سے اغوا کیے جانے والوں اور بعد میں ان کی لاشیں ان کے لواحقین کے حوالے کیے جانے اور اس جیسے سینکڑوں واقعات یہ ثابت نہیں کرتے ہیں کہ کیانی اور سیاسی فوجی قیادت میں موجود اس کے چند غدار ساتھی ہر اس شخص کو نمونہ عبرت بنانا چاہتے ہیں جو ملک سے امریکی راج کے خاتمے اور اسلام کے مکمل نفاذ کا مطالبہ اور جدوجہد کرتا ہے۔ حزب التحریر کیانی پر یہ واضع کر دینا چاہتی ہے کہ اس کی یہ گھٹیا حرکتیں نہ اس سے قبل حزب کو اس کی جدوجہد سے روک سکی ہیں اور نہ آئیندہ وہ اس میں کامیاب ہوگا۔ کیانی کو قزافی، حسنی مبارک اور بن علی جیسے غداروں کا انجام یاد رکھنا چاہیے کہ وہ نہ تو ان جتنا مضبوط ہے اور نہ ہی ان سے زیادہ امریکہ کا پسندیدہ غلام ہے۔ انشاء اللہ خلافت کا قیام عنقریب ہے اور وہ دن مومنین کے لیے خوشی اور کیانی اور اس کے ساتھیوں کے لیے انتہائی خوف کا دن ہو گا۔

شہزاد شیخ

پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان

Join the Facebook Campaign Facebook